فروشگاه اینترنتی هندیا بوتیک
آج: Wednesday, 25 November 2020

www.Ishraaq.in (The world wide of Islamic philosophy and sciences)

وَأَشۡرَقَتِ ٱلۡأَرۡضُ بِنُورِ رَبِّهَا

101a0
دفاعی امور میں رھبر انقلاب اسلامی کے مشیر حسین دھقان نے واضح کیا ہے کہ اسلامی جمھوریہ ایران کسی بھی صورت میں کسی کے ساتھ اپنی دفاعی توانائی کے بارے میں ہرگز کوئی مذاکرات نہیں کرے گا۔
دفاعی امور میں رھبر انقلاب اسلامی کے مشیر جنرل حسین دھقان نے کہا ہے کہ ایک محدود اور ٹیکٹیکی جنگ بھرپور اور خطرناک جنگ میں تبدیل ہو سکتی ہے اور پھر یقینی طور پر امریکہ، علاقہ اور پوری دنیا اس قسم کے وسیع بحران کا سامنا کرنے کی تاب نہیں لا سکے گی۔
سابق وزیر دفاع نے یہ بات ایران کے خلاف فوجی اقدام کے لئے امریکی صدر ٹرمپ کے منصوبے پر مبنی مغربی ذرائع ابلاغ کی بعض رپورٹوں پر ردعمل میں کہی۔
انھوں نے کہا کہ اسلامی جمھوریہ ایران کسی بھی صورت میں کسی کے ساتھ اپنی دفاعی توانائی کے بارے میں ہرگز کوئی مذاکرات نہیں کرے گا۔
دفاعی امور میں رھبر انقلاب اسلامی کے مشیر حسین دھقان نے کہا کہ آئی اے ای اے کے معائنہ کار جب تک جاسوسی کی سرگرمیوں میں ملوث نہیں ہوتے ہیں وہ ایران کی ایٹمی تنصیبات کا معائنہ کر سکتے ہیں۔
انھوں نے غاصب صھیونی حکومت کے ساتھ خلیج فارس کے بعض عرب ملکوں کے حالیہ سمجھوتوں سے متعلق کہا کہ مغربی ایشیا میں اسرائیل کی موجودگی میں اضافہ ایک اسٹریٹیجک غلطی پر منتج ہو سکتا ہے۔
ایران کے سابق وزیر دفاع جنرل دھقان نے واضح کیا کہ اسلامی جمھوریہ ایران سپاہ قدس کے شھید کمانڈر جنرل قاسمی سلیمانی کے خون کے انتقام کے طور پر علاقے سے تمام امریکی فوجیوں کا انخلا دیکھنا چاہتا ہے۔

Add comment


Security code
Refresh