فروشگاه اینترنتی هندیا بوتیک
آج: Thursday, 24 September 2020

www.Ishraaq.in (The world wide of Islamic philosophy and sciences)

وَأَشۡرَقَتِ ٱلۡأَرۡضُ بِنُورِ رَبِّهَا

بچی کا تھا یہ کھنا، بابا نہ جائو رن میں

ھوجاوں گی یتیمہ، بابا نہ جاو رن میں

 اب سووں گی کھاں میں سینہ نہ مل سکے گا

ننھا سا دل ہے میرا کیسے یہ غم سھے گا

 علی کی بیٹی ہے سر برھنہ، نبی ۖکی عترت یوں دربدر ہے

بتا مسلماں ہے کیسی اجرت، رسولۖ کو کیا دیا ثمر ہے

دھائی دیتی ہیں بنت حیدر ،خرد سے لے کام تو اے ظالم

لگائی ہے جس کو آگ تم نے، وھی تمھارے بنیۖ کا گھر ہے

نقش جمیل حسنِ نبوت حسین ہے

روشن چراغ قصر رسالت حسین ہے

درِّ ثمین درج کرامت حسین ہے

خورشیدآسمان امامت حسین ہے

رات آئی ہے شبّیر پہ یلغارِ بلا ہے

ساتھی نہ کوئی یار نہ غمخوار رہا ہے 

مونِس ہے تو اِک درد کی گھنگھور گھٹا ہے
مُشفِق ہے تو اک دل کے دھڑکنے کی صدا ہے

اے سلامی! جذبۂ اخلاص کے روح رواں

پیکرِ ایثار بن کر جس نے دی سب کو اماں

                             اے سلامی جس کو ورثے میں ملی جود و سخا

                             ناز کرتی ھی رھے گی حشر تک جس پر وفا